عید مبارک

بہت سی چیزیں انسان مجموعہ کے طور پر یاد رکھتا ہے ۔ بچپن کی عید بھی انہی چیزوں میں سے ایک ہے۔ پہلی عید کے بارے میں یقین سے تو کچھ بھی نہیں کہہ سکتا لیکن یہ بات ضرور ہے کہ بچپن کی عید بُھلائے نہیں بھولتی۔ شاید بچپن میں یاد رکھنے اور محظوظ ہونے کی صلاحیت زیادہ ہوتی ہے یا شاید جذبات زیادہ معصوم ہوتے ہیں۔ نئے کپڑے ، نئے جوتے ، چپلیں اور عیدی کی خوشی جو اس وقت ہوتی ہے بعد میں حاصل نہیں کی جاسکتی ۔ معصوم پر جوش مسرتیں اگر بچپن میں نا ملیں تو [ ... ]
زمرہ جات: Uncategorized  ۶ تبصرے

اوور رائڈ

دونوں کاریں طوفانی رفتار میں ایکدوسرے سے سبقت لے جانے کی کوشش کررہی تھیں۔شہر کے بیچوں بیچ 120 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار کا پاکستان میں تصوّر ہی نا ممکن  تھا۔ مگر اس دیار غیر میں رفتار کو عظمت حاصل تھی۔ آج بہت عرصہ بعد نوجوانی کا سنسناتا ہوا احساس واپس آیا تھا جیسے کوئی  بہت پرانا اور پیارا دوست بہت سالوں کے بعد اچانک مل گیا ہو۔ سنسناہٹ لہروں کی طرح  ہچکولے کھاتی محسوس ہورہی تھی۔ہاتھ پاور اسٹیئرنگ کو بری طرح نچا رہا تھا۔پیر گویا ایکسیلیٹر اور کلچ پر رقص رہے تھے۔ مقابلے میں  3000 سی سی کی نئی کار تھی. جس میں چار مقامی سیاہ رنگت اور گھنگھریالے بالوں والے نوجوان بیٹھے ہوئے تھے. جن میں سے ہر ایک دولت و آسائش، بے فکری، احساس برتری اور ہارمونز کے زور  پر کسی سکندر اعظم سے کم نا تھا.معمولی بات پر تلخی ہوئی اور نتیجہ پہلے ایکدوسرے کی کتے بلیوں کے ساتھ مشابہت اور بعد میں  ایکدوسرے سے آگے نکلنے کی جنگ کی صورت میں ظاہر ہوا.اسکے ساتھ اب معاملہ انا کاہوگیا جو اسکے لیے ہمیشہ  ایک زبردست اووررائڈ کا کام کرتی تھی. انا کا مارا حقارت نا جھیل سکا اور مقابلہ پر آگیا.انا سے اسکا تعلق محبت  و نفرت کا تھا۔ انا اسکے نزدیک ایک ایسی چھلنی تھی جو چھانتی کم اور روکتی زیادہ ہے. یہاںنہیں جانا . ان لوگوںمیں نہیں بیٹھنا، فلاں نے درست طرح سے بات نہیں کی فلاں کا لہجہ ٹھیک نا تھا فلاں بلاوجہ شیخیاں بگھارتا ہے.مقناطیس کے پول کی طرح اسے کسی بھی دوسرے مقناطیس سے پرے دھکیل دیتا تھا. اسکی  پرانی کا ر کا مقامیوں کی نئی اسپورٹس کار سے کوئی مقابلہ نا تھا، اندر کا خوف بھی کہیں  زیادہ تھا جو ہمیشہ اسکی ذات کو مکڑی کے جالے کی طرح اپنی گرفت میں رکھتا، حادثہ کی صورت میں وہ شدید مشکلات کا شکار ہوسکتا تھا۔گاڑی کی انشورنس بھی زائد المعیاد ہوچکی تھی، عمر بھی اس قسم کے ایڈونچر کی نا تھی مگر اسے اپنی انا میں لپٹی ہوئی ضد پر کوئی قابو نا تھا  اور اسکی حالت اس مشین کی طرح کی ہوگئی تھی جسے عرصہ سے معمول کے فرائض انجام دیتے دیتے کسی ہاتھ نے اچانک اوور رائڈ کردیا ہو۔ اچانک سامنے سگنل آگیاجہاں کچھ کاریں پہلے سے کھڑی تھیں۔ جنون کے عالم میں اس نے گاڑی کی دائیں طرف کے دونوں ٹائر فٹ پاتھ پر چڑھادیےاور تھوڑی سی جگہ میں سے گاڑی گذارتا ہواسگنل کے عین سامنے لے آیا۔گاڑی کا شیشہ نیچے کیا ، گردن گھمائی، جسم کو تھوڑا سا باہر نکالا، چہرے پر تاؤ  دلانے والی مسکراہٹ سجائی اور دور سے ہی ہاتھ ہلا ہلا کر مقامیوں سے  بازاری اردومیں بات کرنا شروع کردی جسے وہ مقامی سن تو نا سکتے تھے مگر  سمجھ بخوبی رہے تھے اب کی بار انکے چہروں پر جوش و حقارت کی بجائے موت کی سی سنجیدگینظر آرہی تھی۔ جبکہ وہ خود اس بات پر حیران ہورہا تھا کہ اسکی متانت کو کیا ہورہا ہے۔ کیا یہ سب کچھ ضروری ہے۔ ایسا  بھی نا تھاکہ وہ تجزیہ اور سمجھنے بوجھنے کی صلاحیتوں سے محروم ہو۔ ذات کا سمجھ بوجھ والا  حصہ  ہمیشہ اس بات  پر جھنجھلا یا رہتا تھا کہ کیوں وہ بچوںکی طرح ہمیشہ ردعمل کو ہی ظاہر کرتا ہے کیوں وہ کسی  بات کو اسکی میرٹس پر انجام دینے سے محروم ہے؟ کیوں اسکی ذات اس خوفناک تقسیم کا شکار ہےجہاں ایک حصے کو دوسرے حصے پر کوئی کنٹرول ہی نہیں ہے۔ ردعمل کسی طوفانی لہر کی طرح آتا اورشخصیت کے بند میں موجود شگافوں کو اور چوڑا کردیتا. سگنل کھلتے ہی اس نے اپنی گاڑی کو  ریس دی اورگاری کو گھماتے ہوئے تیزی سے تیز رو پر  بائیں طرف لے آیا.گاری کے عقبی  آئینے میں دیکھا تو مقامیوں کی گاڑی کسی سانپ کی طرح بل کھاتی جگہیں بناتی اسکے پیچھے چلی آرہی ہے . گاڑی بھگانے میں ایسی مہارت اس نے کم ہی دیکھی تھی.مقامیوں کی اس  حرکت پرپیچھے سے تیز ہارن کی آوازیں آنا شروع ہوگئی تھیں جنکا مقامیوں پر کوئی اثر نا تھا جبکہ اسکے اعصاب کشیدہ ہورہے تھے. تیز آواز اسے ہمیشہ سخت نفرت تھی کیونکہ تیز چلاتی ہوئی آوازکسی جادوگر کی بانسری کی طرح اسکے ردعمل کو باہر نکال کر لے آتی تھی اور پھر  ردعمل کا مارا اس آواز کے پیچھے دوڑ دوڑ کرہلکان ہوجایا کرتا تھا. تھوڑی ہی دور اسکی گاڑی گئی تھی کہ مقامی شاندار ڈرائیونگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے اسکے پیچھے آگئے تھے اور چیلنج دیتے ہوئے ردھم کے ساتھ ہارن بجا رہے تھے جیسے اپنی فتح اور مدمقابل کی شکست کا انہیں مکمل یقین ہو.مگر وہ مجبور تھا اسکی مشین اوور رائڈ ہوچکی تھی.گاڑی کو وہ اب 140 کی اسپیڈ سے دوڑا رہا تھا لیکن چہرے پر اس جواری کی مسکراہٹ  تھی جس کے ہاتھ ترپ کا پتا آگیا ہوسیدھے ہاتھ پر جگہ ملی توپوری قوت اور تیزی کے ساتھ گاڑی کو فاسٹ لین سے سلو لین یعنی داہنی طرف لے آیا. جسکے ساتھہی اسے عقب میں دھماکے کی آواز سنائی دی. مقامیوں کی گاڑی روڈ پر پانی کے رساؤ سے بننےوالے ایک نسبتآ گہرے گڑھے میں اتر کررک چکی تھی. ساتھ ہی ٹائروں کے چرچرانے اور ہارن کی بے تحاشہ آوازیں آنے لگ گئیں. اور ساتھ ہی اسکے حلق سے قہقہوں کا طوفان امنڈ آیا.بے تحاشہ قہقہے لگانےسے گاڑی پر اسکا کنٹرول بھی کچھ دیر کے لیے ختم ہوگیا مگر اسکے قہقہے نا رک سکے. شاہراہ پر موجود اس گڑھے کے بارے میں مقامیوں کے فرشتوں کو بھی علم نا تھا جبکہ اس شاہراہ سے اس کا گذر تقریباََ روز ہی ہوتا تھا اور مقامیوں کی یہی لاعلمی اسکو دیر تک ہنساتی رہی.ہنسی کی شدت  کو اس نے  آنسوؤں کی صورت اپنی آنکھوں اور حلق میں تلخی کی صورت محسوس کیا تو یکدم جمودسا طاری ہوگیا جیسے کائنات رک سی گئی ہو.چاروں طرف اسے مہیب سناٹا سا محسوس ہونے لگا.قہقے رک چکے تھے .چہرے کے عضلات ڈھیلے ہوگئے. سانس بھی نارمل ہوگئی .اسکے اندر کی مشین پھر سے اوور رائڈ ہوچکی تھی. نوٹ: اس فضول سی بکواس میں ادب یا مماثلت تلاش کرنے کی کوشش نا کی جائے۔   Share this:ShareTwitterGoogleEmailTumblrLinkedInFacebook
زمرہ جات: Uncategorized  ۸ تبصرے

پہلا روزہ۔۔۔۔۔۔۔

بہت سے لوگ یادوں کو محل کی صورت تعمیر کرتے ہیں. کچھ لوگوں کے لیے یہ ایک لائبریری ہوتی ہے. مجھے اپنی یادیں  کسی کباڑی کی  دکان    میں پڑا پرانا اور بے ترتیب سامان محسوس ہوتی  ہیں . یادوں کی بھی کوئی قیمت ہوتی ہے اسکا اندازہ ہی نہیں  ہوسکا.  جو بیتا اسے   دماغ  میں موجود ردی کی ٹوکری میں پھینکتا چلا گیا . حال میں گذرتے لمحات کو  کبھی محسوس کرکے محفوظ کرنے کی کوشش ہی نا کی. لیکن ان سب باتوں کے باوجود مجھے اپنا پہلا غم اور پہلا  روزہ نہیں بھولتا. میں نے پہلا روزہ 6 سال کی عمر میں رکھا تھا . شاید عمر اور بھی کم ہو. کیونکہ اس دور کی بہت کم یادیں  باقی ہیں. پہلے روزے پر نا  روزہ کشائی یاد رہی. نا اپنی روزہ رکھنے کی ضد اور شوق  یاد ہے اور نا ہی والدین کا سمجھانا. بس اس دن کی بھوک اور پیاس آج تک نہیں بھولتی۔ نا ہی اس دن کی طوالت بھلائی جاتی ہے۔ صبح کچھ گھنٹے تو خیر و عافیت سے گذر گئے لیکن دوپہر آتے ہی صبر و ضبط جواب دے گیا۔ تکلیف کے ان لمحات میں وہی کام کیا جو آج تک کرتا آرہا ہوں یعنی خاموشی اختیار کرلی۔ ایک عجیب مسئلہ میرے ساتھ ہمیشہ سے یہ رہا کہ میں کبھی بھی اس تکلیف کو جسے میں نے بڑی جانا کبھی کسی کے ساتھ بانٹ نا سکا۔ بچپن کی بھوک اور بچپن کی پیاس کوئی مذاق نہیں ہوتی  بعد میں البتہ  کچھ لوگوں کے لیے ضرور بن جاتی ہے۔ ایک ایک لمحہ گن کر گذارنا پہلی باراس کم عمری میں سیکھا۔ اور یہ بھی معلوم ہوا کہ لمحات  طویل کس طرح ہوتے ہیں۔ ایسی ہی کوئی ناقابل برداشت طوالت آپ پر فرار کی راہیں کھول دیتی ہے. ظہر سے عصر کا وقت بڑی بے چینی سے گزارا. عصر تک حالت جواب دے چکی تھی جسکا اثر چہرے پر نظر آنا شروع ہوگیا. والد صاحب نے توجہ بٹانے کے لیے ساتھ لیا اور افطاری کی خریداری کے لیے ساتھ لے گئے. راستے میں بڑے بھولپن سے پوچھا کہ  ابوروزہ کب کھلے گا؟. والد صاحب نے کہا کہ ” بیٹا مغرب کی اذان کے وقت” ” تومغرب کی اذان کب ہوگی؟” ” بیٹا جب سورج غروب ہوگا تو مغرب کی اذان ہوجائے گی” یہ سنے ہی گاڑی کی کھڑکی سے سورج کو دیکھنے کی کوشش کرنے لگ گیا. اس دن مجھے سورج پر بہت غصٌہ تھا کہ غروب ہونے کا نام ہی نہیں لے رہا.   آج میں اکثر سوچتا ہوں کہ طلوع و غروب  انسان کی مرضی سے ہونے لگے تو کتنی ہی اذیتیں اسکا دامن چھوڑ دیں۔گھر آکربھی بے چینی ختم نا ہوئی تو والدین نے گھڑی کی سوئیوں کے پیچھے لگادیا کہ بیٹا جب چھوٹی سوئی سات پرآجائے گی تو روزہ کھل جائے گا۔ جس کے بعد غصّے کا رخ گھڑی کی جانب ہوگیا۔غصّہ اس بات پر تھا کہ سب سے بڑی اور فضول سی بے مقصد سی سوئی تو بہت تیزی سے حرکت کر رہی ہے جبکہ باقی سوئیاں گھومتی محسوس ہی نہیں ہورہیں۔اور جب چھوٹی سوئیاں حرکت ہی نہیں کر رہیں تو سات پر کیسے آئے گی۔ ایسی ہی معصومانہ الجھن میں وقت کیسے گذرا یاد ہی نہیں رہا مگر یہ بات اچھی طرح سمجھ آگئی وقت کیسا ہی کیوں نا ہو گذر ہی جاتاہے اورپھر واپس نہیں آتا۔ اب میں ٹیگ برادر وقار اعظم اور حاجی صاحب کو کرتا ہوں۔ Share this:ShareTwitterGoogleEmailTumblrLinkedInFacebook
زمرہ جات: Uncategorized  ۱۷ تبصرے

پاسباں مل گئے کعبے کو کنجر خانے سے

پہلی جنگ عظیم کی وجوہات کا تو مجھے نہیں معلوم مگر دوسری جنگ عظیم  کا سبب یہ خاکسار تھا۔ سب معاملات اچھی طرح چل رہے تھے کہ فیس بک پر ایک مشکوک آئی ڈی کےایک  اسٹیٹس  کا  جواب لکھ ڈالا اور اس  کے نتائج   نا صرف مجھے بلکہ بغض اور کینہ کی وجہ سے متعدد اردو بلاگرز کو خواہ مخواہ بھگتنے پڑگئے۔بازاری زبان میں لچر پن کی مثالیں قائم کی گئیں مغلظات اور فحش زبان کا بے دریغ استعمال کیا گیا۔ اخلاق  اور شائستگی کو جس طرحپامال کیا گیا وہ ایک عبرتناک منظر تھا اور یہ سب کچھ  کسی لبرل، قادیانی  یا دین سے بغض رکھنے والوں کی جانب سے نہیں بلکہ ان لوگوں کی جانب سے کیا گیا جنہیں نبی کریم ﷺ سے محبت کا دعویٰ ہے اور خود اپنے بارے میں تحفظ ختم نبوت  کے سپاہی ہونے کا زعم ہے۔ عبرتناک اس لیے بھی کہ ہم جس نبی  کا کلمہ پڑھتے ہیں  انہیں تمام انسانوں میں اخلاق حسنہ کابلند ترین مقام حاصل ہے۔  کل جب یاسر خواہ مخواہ جاپانی نےسوال اٹھایا کہ کیا ہمارا دین ایسا کمزور ہے کہ وہ ایسے گھٹیا لوگوں کی حفاظت کا محتاج ہو ؟ تو مجھے بھی تحریک ملی کہ اس  معاملہ پر بلاگ لکھا جائے  ، آئینہ دکھایا جائے اور کچھ ضروری گذارشات پیش کی جائیں۔  معاملہ شروع ہوا    ، اس اسٹیٹس سے؛ جس  کے جواب  میں  ، میں نے تبصرہ کیا اور اسکے بعد جو کچھ ہوا اسکی ایک جھلک ملاحظہ فرمائیے جسکے بعد مغلظات  اور لچر پن کا ایک نا ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہوگیا۔ اور یہ سلسلہ یہیں رکا نہیں بلکہ میری اور یاسر خواہ مخواہ جاپانی  کی تصویریں اپنی فیس بک وال پر لگا کر ہمیں قادیانی ایجنٹ اور قادیانیوں کا دوست اور ہمدرد ثابت کرنے کی کوشش کی  جو کہ  ایک ناقابل معافی شرانگیزی تھی۔ اس مستقل پراپگینڈے کے جواب میں یاسر خواہ مخواہ نے  اپنا تبصرہ دیا اور حلفاً  دیا کہ وہ ختم نبوت پر کامل یقین رکھتے ہیں ۔ اور  انکے بعد کسی بھی نبوت کے دعویدار کو ملعون اور جہنمی سمجھتے ہیں۔ لیکن اس  واضح اعلان کے باوجود  فاروق درویش نے اپنی زنانہ آئی ڈی سے انکی تصویر کو انتہائی شر انگیز پراپگینڈے کا نشانہ بنا لیا۔  یاسر بھئی کا جواب یہ تھا۔ چندگذارشات : اس پورے فساد میں کچھ چیزیں واضح ہوکر سامنے آئی ہیں۔ ۱) یہ زبان اور یہ طرز کلام کسی دیندار شخص کا نہیں ہوسکتا۔ کیا عجیب طرفہ تماشہ ہے کہ جس نبی کریم ﷺ نے ایک کافر کے کلمہ پڑھنےکے باوجود [ ... ]

فالج کو پہچانیے اور شکست دیجیئے

ایک طویل عرصہ سے بلاگ لکھنے کے لیے کسی قسم کی تحریک نہیں مل رہی تھی لیکن پچھلے دنوں جدّہ کے نواحی علاقہ سے ایک فالج  سے متاثر  شخص کو کلینک میں لایا گیاجسکی حالت زار نے خاصا متاثر کیا ۔سعودی عرب میں بیمار پڑنا ایک نہایت اذیت کا باعث ہوتا ہے  جبکہ فالج سے مفلوج ہوجانا ایک ناقابل بیان اذیت  ہے۔یہ وہ مریض تھاجو باآسانی فالج سے بچ سکتا تھا مگر ضروری معلومات کے نا ہونےاور لاپرواہی کی و جہ سے  اپنا نقصان کر بیٹھا. جس کی وجہ سے خیال آیا کہ  کیوں نا ایسی  معلومات پہنچائی جائے جواس مرض کو اسکی ابتدا  میں  ہی شناخت کرنے  اور اس سے بچاؤ میں مددگار ثابت ہو. اس پوسٹ میں شامل سلائیڈ کی مدد سے محض تھوڑے سے ہی وقت میں آپ فالج کواسکی ابتدا  میں پکڑ سکتے ہیں . Share this:ShareTwitterGoogleEmailTumblrLinkedInFacebook

ٹیکس چور….. سراج الحق؟؟؟

  ٹیکس چور   سراج الحق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ ہے وہ تاثر جو عبدالمالک، عمر چیمہ اور حامد میر نے ٹی وی دیکھنے والوں پر چھوڑا ہے۔ ٹی وی اب وہ ذریعہ ہے جس سے بیشتر لوگ دماغ کی بجائےسوچنے اور کسی نتیجہ پر پہنچتے ہیں۔ سراج الحق صاحب کو تھوڑا بہت ذاتی طور پر بھی جانتا ہوں اور یہ گواہی دینا اپنا فرض سمجھتا ہوں کہ ان جیسا کھرا ،احیائے اسلام کے لئے ہمہ تن مصروف فرد ان میڈیائی بلاؤں کے تصور میں بھی ممکن نہیں۔سراج الحق صاحب ان کارکنوں میں سے ہیں جن کو شروع سے ہی جماعت نے کل وقتی کارکن کی حیثیت [ ... ]

بنیاد پرستوں اور طالبانوں سے معذرت۔۔۔۔۔۔۔

کسی نے کہا تھا کہ ہزاروں سال نرگس اپنی بےنوری پر روتی ہے تو بڑی مشکل سے چمن میں ایک دیدہ ور پیدا ہوتا ہے۔ جب ہم ندیم فاروق پراچہ جیسی شخصیت کو دیکھتے ہیں تو ہمیں اس بات کی حقانیت کا پورا اور صحیح ادراک ہوتا ہے۔ ندیم فاروق پراچہ کا شمار پاکستان کے سب سے زیادہ قابل عزت اور قابل احترام دانشوروں میں ہوتا ہے کہ جن کے سامنے بڑے بڑے دانشور بونے نظر آنے لگ جاتے ہیں۔جنہوں نے اپنی پوری زندگی معاشرے کے سدھار ، بہتری اور ترقی کے لیے وقف کر رکھی ہے اور اس کام کے [ ... ]

عافیہ اور ملالہ کا تقابل اور یاسر پیرزادہ کی بددیانتی

یاسر پیرزادہ کا شمار  میں ان کالم نگاروں میں کرتا ہوں جنہیں انکی صحافتی اورعلمی بدیانتیوں کی وجہ سے پڑھنا میرے لیے کسی اذیت سے کم نہیں ہوتا۔ یاسر پیرزادہ آئے دن وارداتیں کرتے رہتے ہیں۔ انکی تازہ واردات عافیہ صدیقی اور ملالہ یوسف زئی کا تقابل ہے جو انہوں نے آج کے روزنامہ جنگ کے اپنے ایک کالم میں کیا ہے۔ اس کالم کو پڑھ کر طبیعت نے ایک بار پھر کراہت محسوس کی۔ اپنے تازہ کالم میں یاسر پیرزادہ نے نمک کا حق ادا کرتے ہوئے عافیہ صدیقی کی پانچ سالہ گمشدگی کو موضوع بحث بناتے ہوئے اپنا [ ... ]

طلاق نامہ

پاکستانی معاشرے میں ٹوٹ پھوٹ کا عمل اتنی تیزی سے اور اتنا واضح ہوچکا ہے کہ اسے دیکھنے اور سمجھنے کے لیے کسی بھی قسم کی ذہانت کی ضرورت نہیں ہر وہ شخص جو اس معاشرے میں رہ رہا ہے وہ اس ٹوٹ پھوٹ اور انحطاط کا بخوبی احساس رکھتا ہے۔ اس معاشرتی انحطاط کے کئی پہلو ہیں۔ جن کے بارے میں سوچ کر ہی دل افسردہ ہو جاتا ہے۔ اور یہ بات سمجھنے کے لیے بھی کسی قسم کی ذہانت کی ضرورت نہیں ہے کہ تہذیبی انقلابات چاہے مثبت ہوں یا منفی نہایت دیرپا ہوتے ہیں۔کیونکہ اسکی جڑیں لوگوں [ ... ]

کوا کہانی

گئے وقت میں کسی شاعر کم دانشور نے جب ملکی حالات پر غور کیا تو جو انکشافات ہوئے اس میں ایک روح فرسا انکشاف یہ بھی تھا کہ گلستان کے حالات اب بدل نہیں سکتے کیونکہ یہاں ہر شاخ پر ایک الوّ بیٹھا ہوا ہے۔اس بات سے دوسرے صاحب نے نصیحت انگیز حکایت کی صورت اختلاف کیا اور بتایا  کہ گلستان الّو کی وجہ سے نہیں بلکہ ناانصافیوں کی وجہ سے ویران ہو جاتے ہیں۔ لیکن میرا اپنا ذاتی خیال یہ ہے کہ گلستان اور الّومیں کسی بھی قسم  کا تعلق بڑا عجیب سا ہے۔ میں نے اپنی گناہگار آنکھوں سے [ ... ]